Trending News

FBR crackdown on fake cigarettes, stock worth Rs.96 million seized

Contents

FBR crackdown on fake cigarettes, stock worth Rs.96 million seized

Pakistan’s Federal Board of Revenue (FBR) has dealt a major blow to the fake cigarette business in a recent nationwide operation. The crackdown resulted in the seizure of fake and unstamped cigarettes with an estimated market value of Rs. 96 million

FBR takes action against illegal tobacco

The successful operation was conducted under the direction of FBR Chairman Malik Amjad Zubair Towana and under the direct supervision of Member Inland Revenue (Operations) Mir Badshah Khan Wazir. IR field formations mobilized teams specifically to deal with the smuggling of foreign cigarettes.

Possession Details

  • Quantity: FBR teams seized a substantial quantity of fake cigarettes, totaling 1,235 packs. (A packrite is a standard unit of cigarette measurement, usually containing 50,000 sticks.)
  • Estimated Value: The estimated market value of the seized cigarettes is Rs. 96 million, highlighted the significant scale of illegal activities.

Effects of Crackdown

The FBR’s action disrupts the supply chain of counterfeit cigarettes and protects legitimate businesses that comply with tax regulations. The crackdown also protects public health, as counterfeit cigarettes often lack adequate quality control and contain harmful substances.

Result

The FBR’s recent action shows its determination to curb the smuggling and sale of fake cigarettes. These efforts are intended to protect government revenues, ensure fair competition for legitimate businesses, and promote public health.

Frequently Asked Questions

What are the health risks of fake cigarettes?

Counterfeit cigarettes may not be subject to the same quality control standards as legitimate brands. This can lead to the presence of harmful additives or contaminants, which can pose a greater health risk to consumers.

How does the sale of fake cigarettes affect the economy?

The smuggling and sale of counterfeit cigarettes deprives the government of tax revenue. This lost revenue could be used to fund essential public services.

  • What can be done to further tackle the counterfeit cigarette trade?

Public awareness campaigns can educate consumers about the dangers of counterfeit cigarettes and encourage them to buy from legitimate sources. Additionally, stricter enforcement measures can further deter smuggling and illegal sales.

ایف بی آر کا جعلی سگریٹ پر کریک ڈاؤن، روپے مالیت کا اسٹاک ضبط 96 ملین

پاکستان کے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے حالیہ ملک گیر آپریشن میں جعلی سگریٹ کے کاروبار کو ایک اہم دھچکا لگایا ہے۔ کریک ڈاؤن کے نتیجے میں جعلی اور نان اسٹیمپڈ سگریٹ ضبط کیے گئے جن کی تخمینہ مارکیٹ مالیت روپے ہے۔ 96 ملین

ایف بی آر نے غیر قانونی تمباکو کے خلاف ایکشن لیا

کامیاب آپریشن ایف بی آر کے چیئرمین ملک امجد زبیر ٹوانہ کی ہدایت اور ممبر ان لینڈ ریونیو (آپریشنز) میر بادشاہ خان وزیر کی براہ راست نگرانی میں کیا گیا۔ IR فیلڈ فارمیشنز نے خاص طور پر غیر ملکی سگریٹ کی اسمگلنگ سے نمٹنے کے لیے ٹیموں کو متحرک کیا۔

قبضے کی تفصیلات

  • مقدار: ایف بی آر کی ٹیموں نے جعلی سگریٹ کی کافی مقدار ضبط کی، کل 1,235 پیکرائٹس۔ (ایک پیکرائٹ سگریٹ کی پیمائش کی ایک معیاری اکائی ہے، جس میں عام طور پر 50,000 چھڑیاں ہوتی ہیں)
  • تخمینی قیمت: ضبط کیے گئے سگریٹ کی تخمینہ مارکیٹ قیمت روپے ہے۔ 96 ملین، غیر قانونی سرگرمیوں کے اہم پیمانے پر روشنی ڈالی.

کریک ڈاؤن کے اثرات

ایف بی آر کی کارروائی جعلی سگریٹ کی سپلائی چین میں خلل ڈالتی ہے اور ٹیکس کے ضوابط کی تعمیل کرنے والے جائز کاروبار کی حفاظت کرتی ہے۔ یہ کریک ڈاؤن صحت عامہ کی بھی حفاظت کرتا ہے، کیونکہ جعلی سگریٹ میں اکثر مناسب کوالٹی کنٹرول نہیں ہوتا اور ان میں نقصان دہ مادے ہوتے ہیں۔

نتیجہ

ایف بی آر کی حالیہ کارروائی جعلی سگریٹ کی اسمگلنگ اور فروخت کو روکنے کے لیے اس کے عزم کو ظاہر کرتی ہے۔ ان کوششوں کا مقصد حکومتی محصولات کا تحفظ، جائز کاروبار کے لیے منصفانہ مسابقت کو یقینی بنانا، اور صحت عامہ کو فروغ دینا ہے۔

اکثر سوالات

جعلی سگریٹ سے صحت کو کیا خطرات لاحق ہیں؟

جعلی سگریٹ جائز برانڈز کی طرح کوالٹی کنٹرول کے اسی معیار کے تابع نہیں ہوسکتے ہیں۔ یہ نقصان دہ additives یا contaminants کی موجودگی کا باعث بن سکتا ہے، جو صارفین کے لیے صحت کے لیے زیادہ خطرہ بن سکتا ہے۔

  • جعلی سگریٹ کی فروخت معیشت پر کیسے اثر انداز ہوتی ہے؟

جعلی سگریٹ کی سمگلنگ اور فروخت حکومت کو ٹیکس ریونیو سے محروم کر دیتی ہے۔ یہ کھوئی ہوئی آمدنی ضروری عوامی خدمات کو فنڈ دینے کے لیے استعمال کی جا سکتی ہے۔

  • جعلی سگریٹ کے کاروبار سے مزید نمٹنے کے لیے کیا کیا جا سکتا ہے؟

عوامی آگاہی کی مہمات صارفین کو جعلی سگریٹ کے خطرات سے آگاہ کر سکتی ہیں اور انہیں جائز ذرائع سے خریدنے کی ترغیب دے سکتی ہیں۔ مزید برآں، سخت نفاذ کے اقدامات اسمگلنگ اور غیر قانونی فروخت کو مزید روک سکتے ہیں۔

FBR crackdown on fake cigarettes, stock worth Rs.96 million seized
FBR crackdown on fake cigarettes, stock worth Rs.96 million seized

Majid Farooq

Mastering the art of words and storytelling, I bring content to life in two ways. During the day, I create interesting blog posts. By night, I transform into your trusted newscaster, delivering exclusive headlines with a personal touch. Stay informed, stay ahead – with me.

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button