Latest Educational Notifications

Red flags in Khyber Pakhtunkhwa: Hundreds of teachers continue to collect salaries despite skipping classes

Contents

Red flags in Khyber Pakhtunkhwa: Hundreds of teachers continue to collect salaries despite skipping classes

A disturbing report from Khyber Pakhtunkhwa (KP) exposes possible misuse of public funds in the education sector. According to the documents, hundreds of teachers of the Higher Education Department are receiving salaries despite not conducting classes. This raises serious concerns about accountability and the quality of education students receive.

Unethical Practices, Unequal Results

The report highlights two key issues:

  • Incomplete teaching hours: A significant number of teachers, estimated to be around 200, are employed in various government degree colleges in KP. However, they are not meeting the mandated teaching hours, raising questions about their actual workload and contribution.
    ** Misplacement of staff:** Documents show that an additional 679 teachers have been posted to positions that do not match their qualifications or skills. This inconsistency can adversely affect the quality of education imparted to students.

Improvement Attempts

The report acknowledges the efforts of the Secretary, Higher Education Department (HED) to address these anomalies. However, the details and timeline for reform are not clear.

Implications and Concerns

This situation has far-reaching consequences:

  • Wasted Resources: Salaries paid to non-performing teachers represent a misuse of public funds earmarked for education.
  • Unequal learning environment: Students in colleges with absent or wrong teachers are disadvantaged compared to qualified teachers.
  • Teacher Overload: The report also cites staff shortages at some colleges, leading to overworked and overburdened teachers who may struggle to give adequate attention to students. .

Result

The situation in KP highlights the need for strict transparency and accountability in the education sector. A thorough investigation is necessary to identify the root causes of these problems. Measures need to be implemented to ensure that teachers fulfill their assigned roles and that students receive quality education.

Frequently Asked Questions

Question: How many teachers are allegedly not conducting classes in KP?
A: The report estimates that around 200 teachers are not completing their teaching hours.
What is being done to resolve this issue?
A: HED is reportedly taking steps to remedy the situation, but specific details and timelines are unclear.
*How does this situation affect students?
A: In colleges with absent or wrong teachers, students may not receive adequate education and may be at a disadvantage compared to their peers.

خیبرپختونخوا میں سرخ جھنڈے: سیکڑوں اساتذہ کلاسز چھوڑنے کے باوجود تنخواہیں لے رہے ہیں

خیبر پختونخواہ (کے پی) سے ایک پریشان کن رپورٹ تعلیم کے شعبے میں عوامی فنڈز کے ممکنہ غلط استعمال کو بے نقاب کرتی ہے۔ دستاویزات کے مطابق محکمہ ہائر ایجوکیشن کے سینکڑوں اساتذہ کلاسز نہ کروانے کے باوجود تنخواہیں وصول کر رہے ہیں۔ یہ جوابدہی اور طلبا کو حاصل ہونے والی تعلیم کے معیار کے بارے میں سنگین خدشات کو جنم دیتا ہے۔

غیر اخلاقی عمل، غیر مساوی نتائج

رپورٹ میں دو اہم مسائل پر روشنی ڈالی گئی ہے:

  • ادھوری تدریسی اوقات: اساتذہ کی ایک قابل ذکر تعداد، جس کا تخمینہ 200 کے قریب ہے، کے پی کے مختلف سرکاری ڈگری کالجوں میں ملازم ہیں۔ تاہم، وہ لازمی تدریسی اوقات کو پورا نہیں کر رہے ہیں، جو ان کے اصل کام کے بوجھ اور شراکت کے بارے میں سوالات اٹھا رہے ہیں۔
    ** اسٹاف کی غلط جگہ:** دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ اضافی 679 اساتذہ کو ان عہدوں پر تعینات کیا گیا ہے جو ان کی اہلیت یا مہارت کے مطابق نہیں ہیں۔ یہ عدم مطابقت طلباء کو دی جانے والی تعلیم کے معیار پر منفی اثر ڈال سکتی ہے۔

** اصلاح کی کوششیں**

رپورٹ میں ان بے ضابطگیوں کو دور کرنے کے لیے ہائر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ (HED) کے سیکریٹری کی کوششوں کا اعتراف کیا گیا ہے۔ تاہم، اصلاح کے لیے تفصیلات اور ٹائم لائن واضح نہیں ہے۔

اثرات اور خدشات

اس صورت حال کے بہت دور رس نتائج ہیں:

  • ضائع شدہ وسائل: غیر فعال اساتذہ کو ادا کی جانے والی تنخواہیں تعلیم کے لیے مختص عوامی فنڈز کے غلط استعمال کی نمائندگی کرتی ہیں۔
  • غیر مساوی تعلیمی ماحول: غیر حاضر یا غلط اساتذہ والے کالجوں کے طلباء اہل اساتذہ کے مقابلے میں پسماندہ ہیں۔
  • اساتذہ کا بوجھ: رپورٹ میں کچھ کالجوں میں عملے کی کمی کا بھی ذکر کیا گیا ہے، جس کی وجہ سے زیادہ کام کرنے والے اور زیادہ بوجھ والے اساتذہ ہیں جو طلباء کو مناسب توجہ دینے کے لیے جدوجہد کر سکتے ہیں۔

نتیجہ

کے پی کی صورتحال تعلیم کے شعبے میں سخت شفافیت اور جوابدہی کی ضرورت کو اجاگر کرتی ہے۔ ان مسائل کی اصل وجوہات کی نشاندہی کرنے کے لیے ایک مکمل تحقیق ضروری ہے۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات پر عمل درآمد کرنے کی ضرورت ہے کہ اساتذہ اپنے مقرر کردہ کردار کو پورا کر رہے ہوں اور طلباء معیاری تعلیم حاصل کریں۔

اکثر سوالات

سوال: کے پی میں مبینہ طور پر کتنے اساتذہ کلاسز نہیں چلا رہے ہیں؟
ج: رپورٹ میں اندازہ لگایا گیا ہے کہ تقریباً 200 اساتذہ اپنے تدریسی اوقات پورے نہیں کر رہے ہیں۔
اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے کیا کیا جا رہا ہے؟
A: HED مبینہ طور پر صورتحال کو ٹھیک کرنے کے لیے اقدامات کر رہا ہے، لیکن مخصوص تفصیلات اور ٹائم لائنز واضح نہیں ہیں۔
* یہ صورتحال طلباء پر کیسے اثر انداز ہوتی ہے؟
A: غیر حاضر یا غلط اساتذہ والے کالجوں میں طلباء مناسب تعلیم حاصل نہیں کر سکتے اور اپنے ساتھیوں کے مقابلے میں نقصان کا شکار ہو سکتے ہیں۔

Red flags in Khyber Pakhtunkhwa: Hundreds of teachers continue to collect salaries despite skipping classes
Red flags in Khyber Pakhtunkhwa: Hundreds of teachers continue to collect salaries despite skipping classes

Majid Farooq

Mastering the art of words and storytelling, I bring content to life in two ways. During the day, I create interesting blog posts. By night, I transform into your trusted newscaster, delivering exclusive headlines with a personal touch. Stay informed, stay ahead – with me.

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button